کینیڈا سے تنازع میں سعودی عرب نے ثالثی کا امکان مسترد کردیا

ریاض: سعودی عرب کی جانب سے کینیڈا کے ساتھ بڑھتےہوئے سفارتی تنازع میں کسی قسم کی ثالثی کے امکان کو مسترد کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ اوٹوا کو معلوم ہے کہ اتنی بڑی غلطی کو کیسی درست کیا جائے۔

سعودی دارلحکومت میں ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سعودی وزیر خارجہ عادل بن احمد الجبير کا کہنا تھا کہ اس معاملے میں’ ثالثی کی کوئی گنجائش نہیں ، ایک غلطی کی گئی جسے سدھارنا ہوگا‘۔

واضح رہے کہ کینیڈین سفیر کی جانب سے سعودی عرب میں قید سماجی کارکنان کی رہائی کے مطالبے پر سعودیہ نے شدید ردعمل دیتے ہوئے کینیڈا کے ساتھ تجارتی تعلقات منقطع کرتے ہوئے کنیڈین سفیر کو ملک بدر کردیا تھا۔

اس کےساتھ کینیڈا میں سعودی سرپرستی میں چلنے والے تعلیمی اور طبی پروگرامز بھی ختم کرنے کا اعلان کیا گیا تھا، جبکہ کینیڈا میں زیر تعلیم ہزاروں سعودی طلبہ اور زیر علاج مریضوں کو منتقل کرنے کا بھی منصوبہ بنایا تھا۔

سماجی کارکنان کی گرفتاری کے پسِ پردہ محرکات کے حوالے سے کیے گئے سوال کے جواب میں سعودی وزیر کا کہنا تھا کہ جب ان کے خلاف مقدمات پیش کیے جائیں گے تو ان کے الزامات کی نوعیت کے بارے میں بتادیا جائے گا۔

تاہم انہوں نے انہوں نے اس سے قبل کیے جانے والے دعوے کو دوبارہ دہرایا کہ زیر حراست افراد کے غیر ملکی اداروں سےتعلقات تھے۔