کے الیکٹرک کا رمضان المبارک کے دوران کراچی میں بدترین لوڈشیڈنگ کا عندیہ

کراچی: کے الیکٹرک کی ڈائریکٹر ذرائع ابلاغ سعدیہ دادا کا کہنا ہے کہ شارٹ فال دو گنا ہونے کے باعث رمضان المبارک اور ویسٹ انڈیز کی سیریز کے دوران بجلی کا بحران شدت اختیار کرسکتا ہے۔

کراچی میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے کے الیکٹرک کی ڈائریکٹر ذرائع ابلاغ سعدیہ دادا کا کہنا تھا کہ کے الیکٹرک کو سوئی سدرن گیس کمپنی کی جانب سے پہلے 193 ایم ایم سی ایف ڈی گیس مل رہی تھی لیکن اب صرف 90 ایم ایم سی ایف ڈی مل رہی ہے، کہا جارہا ہے کہ ہمارا سوئی سدرن گیس کمپنی سے کوئی معاہدہ نہیں ہے اگر معاہدہ نہیں ہے تو 90 ایم ایم سی ایف ڈی گیس بھی کیوں دی جارہی ہے۔

سعدیہ دادا کا کہنا تھا کہ ایس ایس جی ایس نیشنل گیس ایلوکیشن پالیسی کے تحت جی ایس اے کرنا چاہتی ہے تو ہم تیار ہیں لیکن پہلے یہ بتایا جائے کہ جی ایس اے سائن کرنے سے مسئلہ حل ہوجائے گا۔ اس وقت گیس کی کمی کے باعث 100 میگا واٹ بجلی فراہم کی جارہی ہے اور شارٹ فال 300 میگا واٹ سے بڑھ کر دوگنا زیادہ ہوگیا ہے جس کی وجہ سے شہر میں لوڈشیڈنگ کا دورانیہ بڑھا دیا گیا ہے اور صنعتی زونز میں بھی لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے اور اگر مسئلہ حل نہ ہوا تو پاکستان اور ویسٹ انڈیز کے مابین ہونے والی کرکٹ سیریز کے دوران اور رمضان المبارک میں بجلی کا بحران مزید شدت اختیار کرسکتا ہے۔

ترجمان کے الیکٹرک نے کہا کہ اگر ہم نے 24 ارب روپے کے واجبات میں سے 10 ارب روپے ادا کردیئے ہیں اور واجبات کا معاملہ عدالت میں زیرِسماعت ہے اگر واجبات کا مسئلہ ہے تو ہماری درخواست ہے کہ عوام کے مفاد میں فیصلہ کیا جائے۔

دوسری جانب کے الیکٹرک کو گیس کی فراہمی میں کمی پر کمشنر کراچی اعجاز احمد خان نے سوئی گیس کمپنی کو خط لکھا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ وزیراعلیٰ سندھ کی کوششوں سے یکم اپریل سے کرکٹ سیریز ہورہی ہے ، شہر میں امتحانات بھی جاری ہیں اور سخت گرمی کے باعث ہیٹ ویو کا بھی خدشہ ہے اور کے الیکٹرک کو گیس کی کمی کے باعث بجلی کی فراہمی میں دشواری ہے، لہذٰا گیس کمپنی ترجیحی اقدامات بنیاد پر بجلی کی فراہمی میں کے الیکٹرک کی گیس کی ضرورت پوری کرے۔

وفاقی وزیر پاور ڈویژن اویس لغاری نے بھی کے الیکٹرک اور سوئی سدرن کے تنازع کا نوٹس لیتے ہوئے کہا ہے کہ کراچی میں شدیدگرمی ہے، اس صورت حال میں کے الیکٹرک عوام کی سہولت کے پیش نظرتمام ممکنہ اقدامات کرے، نیپرا بھی شہر میں جاری اضافی لوڈشیڈنگ کا نوٹس لے، کے الیکٹرک اور سوئی سدرن گیس کمپنی عوام کو بجلی کی فراہمی کے لیے اپنا باہمی معاملہ قانون کے مطابق حل کریں۔