ایگزیکٹ کے سربراہ شعیب شیخ منی لانڈرنگ کیس میں گرفتار

کراچی: سندھ ہائیکورٹ نے منی لانڈرنگ اسکینڈل میں ایگزیکٹ کے سی ای او شعیب شیخ کی درخواستِ ضمانت مسترد کردی جس پر ایف آئی اے نے ملزم کو گرفتار کرلیا۔

سندھ ہائیکورٹ میں ایگزیکٹ اسکینڈل اور منی لانڈرنگ کیس کی سماعت ہوئی۔ وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) نے آئی ٹی کمپنی ایگزیکٹ کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر شعیب شیخ کی بریت کے خلاف اپیل دائر کی جو عدالت نے منظور کرلی۔ ہائیکورٹ نے مقدمہ ٹرائل کورٹ سماعت کیلئے بھیجتے ہوئے 3 ماہ میں کیس کا فیصلہ کرنے کا حکم دیا۔

شعیب شیخ کی بریت کے خلاف اپیل منظور ہونے پر ایف آئی اے کی ٹیم نے احاطہ عدالت سے ملزم کو گرفتار کرنے کی کوشش کی تو شعیب شیخ کے وکلا نے مزاحمت کی۔ ایف آئی اے حکام نے کہا کہ شعیب شیخ کی بریت کا فیصلہ کالعدم ہوا ہے اس لیے انہیں گرفتار کرکے جیل منتقل کریں گے۔

ملزم کے وکلا نے کہا کہ عدالت نے شعیب شیخ کی گرفتاری کا کوئی حکم نہیں دیا۔ وکلا نے عدالت میں شعیب شیخ کی 3 دن کی حفاظتی ضمانت کی درخواست دائر کی لیکن عدالت نے حفاظتی ضمانت کی درخواست مسترد کردی۔

ایف آئی اے کی ٹیم صبح 10 بجے سے شعیب شیخ کی گرفتاری کے لیے کمرہ عدالت کے باہر بیٹھی رہی لیکن ملزم گرفتاری کے خوف سے عدالت سے باہر نہ نکلا اور درخواست ضمانت کا فیصلہ آنے کا انتظار کرتا رہا۔ عدالت نے شام ساڑھے 6 بجے فیصلہ سناتے ہوئے شعیب شیخ کی حفاظتی ضمانت کی درخواست مسترد کردی۔ جس کے بعد ملزم کو کمرہ عدالت سے باہر آنا پڑا تو باہر موجود ایف آئی اے کی ٹیم نے ملزم کو گرفتار کرلیا۔