شاہ زیب قتل کیس کا مرکزی ملزم شاہ رخ جتوئی رہا

کراچی: عدالت نے شاہ زیب قتل کیس کے مرکزی ملزم شاہ رخ جتوئی سمیت تمام ملزمان کی ضمانت منظور کرلی جس کے بعد شاہ رخ جتوئی کو رہا کردیا گیا دیگر ملزمان کو کچھ دیر میں رہائی مل جائے گی۔

ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج کراچی جنوبی امداد حسین کھوسو نے شاہ زیب قتل کیس میں ملزمان کی جانب سے ضمانت کی درخواست کی سماعت کی۔ سماعت کے دوران مقتول کے والد اورنگزیب خان نے راضی نامہ جمع کرادیا۔ راضی نامے میں موقف اختیار کیا گیا کہ انہوں نے مشاورت کے بعد ملزمان سے صلح نامہ کیا وہ اور ان کے گھر والے اللہ کی رضا کے لیے اپنے بیٹے کا خون معاف کرتے ہیں۔ ملزمان شاہ رخ جتوئی، سراج تالپور، سجاد تالپور اور غلام مصطفی کو ضمانت دی جائے اور ان کےخلاف مقدمہ بھی ختم کیا جائے۔

عدالت نے فریقین کا موقف سننے کے بعد ملزمان شاہ رخ جتوئی، سجاد تالپور، غلام مرتضی سمیت تمام ملزمان کی فی کس 5،5 لاکھ روپے کے ضمانتی مچلکوں کے عوض ضمانت منظور کرلی جس کے بعد کچھ دیر قبل شاہ رخ جتوئی کو رہا کردیا، شاہ رخ جتوئی کو منہ چھپا کر انہیں جیل سے باہر گاڑی میں بٹھایا گیا۔

واضح رہے کہ سال 2012ء میں کراچی کے پوش علاقے ڈیفنس میں پولیس آفیسر اورنگزیب کے جوان سالہ بیٹے شاہ زیب کو جھگڑے کے بعد قتل کردیا گیا تھا۔ سابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی جانب سے ازخود نوٹس لیے جانے کے بعد ملزمان کا مقدمہ انسداد دہشت گردی کی عدالت میں چلا تھا، سماعت کے دوران مقتول کے باپ نے قاتلوں کے گھر والوں سے صلح نامہ کرلیا تھا تاہم سپریم کورٹ نے اسے قبول کرنے کے بجائے مقدمہ چلانے کا حکم دیا تھا۔