لوڈشیڈنگ بے قابو ، بڑے شہروں میں 6 ، چھوٹے شہروں میں 12 گھنٹے بجلی بند

لاہور : بجلی لوڈ شیدنگ کا مسئلہ بدستور جاری ہے ۔ ملک بھر میں غیر اعلانیہ اور جبری لوڈ شیڈنگ بھی ہونے لگی ، بڑے شہروں میں چھ سے آٹھ اور چھوٹے شہروں و دیہی علاقوں میں بارہ گھنٹے سے بھی زیادہ بجلی بندش ہونے لگی ۔

این ٹی ڈی سی ذرائع کے مطابق بجلی کی طلب 16 ہزار 300 میگاواٹ تک پہنچ گئی ہے ، بجلی کی پیداوار صرف 10 ہزار ایک سو میگاواٹ ہے جس سے بجلی کا شارٹ فال چھ ہزار دو سو میگاواٹ تک پہنچ گیا ہے جبکہ بڑے ڈیمز میں پانی کی سطح انتہائی کم ہونے سے پن بجلی کی پیداوار ساڑھے پانچ ہزار میگاواٹ کی بجائے صرف ایک ہزار 400 میگاواٹ تک ہے اور بجلی کی پیداوار کا تمام بوجھ آئی پی پیز اور تھرمل پاور پلانٹس پر آ چکا ہے ۔ بجلی کا شارٹ فال زیادہ ہونے سے بجلی کی تقسیم کا کمپنیوں کے لوڈ شیڈنگ کے جاری کردہ شیڈول کاغذوں تک ہی دھرے رہ گئے ۔

سسٹم اوور لوڈ ہونے سے نیشنل پاور کنٹرول سنٹر سے تقسیم کار کمپنیوں کو بتائے بغیر ہی بجلی کی بندش ہونے لگی جس سے شہری علاقوں میں چار سے چھ اور دیہی علاقوں میں آٹھ گھنٹے بجلی کی لوڈ شیڈنگ کے شیڈول سے زیادہ بجلی کی بندش ہو رہی ہے ۔ ذرائع کے مطابق بڑے ڈیمز سے پن بجلی کی پیداوار میں اضافے تک بجلی کی لوڈ شیڈنگ کے دورانیہ میں کمی نہیں ہو سکے گی اور مزید چند روز طویل دورانیہ کی بجلی لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ جاری رہے گا ۔