یونیورسٹی روڈ:اعلانات کے باوجود متبادل راستہ بنایا گیا

کراچی: ڈپٹی میئر ارشد ووہرا کے اعلان کے بعد شہریوں کو توقع تھی کہ شاید آج یونیورسٹی روڈ پر صورتحال کچھ بہتر ہو گی اور سٹی وارڈنز کی تعیناتی کے بعد ٹریفک کی روانی بھی کچھ بہتر ہو گی لیکن ایسا نہ ہو سکا۔

حسن سکوائر سے اردو یونیورسٹی تک سٹی وارڈنز تو کیا ٹریفک پولیس کا نامو نشان تک نہ تھا۔ 5 انسانی جانوں کے ضیاع پر وعدے تو بہت ہوئے لیکن وفا نہ ہو سکے۔ شہری کہتے ہیں کہ وہ اب بھی مشکلات سے دو چار ہیں اور یہ مشکلات کب ختم ہوں گی، کسی کو کچھ معلوم نہیں۔

ڈپٹی میئر کے ساتھ ساتھ سندھ کے وزیر ٹرانسپورٹ نے بھی شہریوں کے لئے سہولتوں کا اعلان کیا تھا لیکن شہری کہتے ہیں کہ یہاں تو الٹا مزید مشکلات پیدا ہو گئی ہیں۔

ایک ارب ستر کروڑ روپے کی لاگت سے اس منصوبے کی تکمیل میں ابھی چار ماہ باقی ہیں یعنی مشکلات کا دورانیہ طویل ہے۔