بھارت نے دفاعی بجٹ میں ایک بار پھر اضافہ کردیا

نئی دلی: بھارتی وزیر خزانہ ارون جیٹلی نے لوک سبھا میں نئے مالی سال کے بجٹ کی چیدہ چیدہ تفصیلات پیش کیں جن کے مطابق یہ خسارے کا بجٹ ہوگا لیکن ساتھ ہی ساتھ دفاعی اخراجات میں اضافے کا اعلان بھی کیا ہے جو مجموعی بجٹ کا 13 فیصد بنتا ہے۔

خبر رساں ایجنسیوں کے مطابق یکم اپریل 2017 سے شروع ہونے والے نئے بھارتی مالی سال کے دوران سرکاری اخراجات کا تخمینہ 214 کھرب 70 ارب روپے لگایا گیا ہے جس میں سے 7 کھرب 9 ارب روپے کے اخراجات اندرونی اور بیرونی قرضوں سے پورے کئے جائیں گے جبکہ متوقع حکومتی آمدنی 207 کھرب 62 ارب روپے رہے گی۔ اس لحاظ سے یہ 3.2 فیصد خسارے کا بجٹ ہے جس میں حکومتی اخراجات میں 25.4 فیصد کا اضافہ بھی کیا جائے گا۔

اس موقعے پر ارون جیٹلی نے مودی سرکار کی مالیاتی پالیسیوں سے پیدا ہونے والے بحران کا اعتراف کرتے ہوئے دعوی کیا کہ یہ بحران جلد ہی ختم ہوجائے گا۔

تشویش کی بات یہ ہے تمام تر مالیاتی بحرانوں کے باوجود، بھارتی حکومت نے نئے مالی سال میں دفاعی بجٹ کےلئے 27 کھرب 40 ارب روپے مختص کئے ہیں جو 31 مارچ 2017 کو اختتام پذیر ہونے والے مالی سال میں بھارتی فوجی بجٹ (24 کھرب 70 ارب روپے) کے مقابلے میں 11 فیصد زائد ہیں۔

بھارتی وزیر خزانہ کے مطابق، نئے بجٹ میں تقریباً 8 کھرب 65 ارب روپے جاری فوجی اخراجات کی مد میں جبکہ باقی کے 18 کھرب 75 ارب روپے نئے ہتھیاروں کی خریداری پر صرف کئے جائیں گے۔