نوازشریف کورعایت نہیں ملے گی ،عمران خان

اسلام آباد: تحریک انصاف کے چیرمین عمران خان کا کہنا ہے کہ وزرا مجھے مریم نواز کے کہنے پر گالیاں دیتے اور برا بھلا کہتے ہیں جب کہ (ن) لیگ والے یہ سجھتے ہیں کہ ایسا کرنے سے نوازشریف کو رعایت مل جائے گی لیکن یہ ان کی بھول ہے۔

چیرمین تحریک انصاف عمران خان کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ کے باہر حکمران جماعت کی پوری کابینہ موجود ہوتی ہے اور مجھے گالیاں دی جاتی ہیں، یہ سب مریم نواز کے کہنے پر ہوتا ہے وہ ہرروز تمام وزار سے باری باری پوچھتی ہیں کہ تم نے عمران خان کو کتنی گالیاں دیں اور کتنا برا کہا اور دھمکی دیتی ہیں کہ اگر تم نے ایسا نہ کیا تو میں سب کے کرپشن کے کیس عوام کے سامنے لے آؤں گی۔ (ن) لیگ والے کہتے ہیں کہ عمران خان کو اتنا برا کہا جائے کہ نوازشریف کو پاناما کیس میں رعایت مل جائے، یہ کیا سوچتے ہیں کہ مجھے برا بھلا کہہ کر کیس سے بچ جائیں گے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ مجھ پر الزام لگایا جاتا ہے کہ میں گالی دینے والا سیاستدان ہوں، میری گالی یہ ہے کہ نوازشریف ملک کا سب سے بڑا کرپٹ آدمی اور ڈاکو ہے،میں اس پر قائم ہوں کیوں کہ میں نوازشریف کو 30 سال سے جانتا ہوں، انہوں نے ایک فیکٹری سے اقتدارمیں آنے کے بعد 30 فیکٹریاں بنائی ہیں، اقتدارمیں آکر ذات کو فائدہ پہنچانا ہی کرپشن ہے اور جب میں ان کی اصلیت بتاتا ہوں تو مجھ پر کرپشن کے الزامات لگائے جاتے ہیں جب کہ میں کبھی بھی اقتدار میں نہیں آیا اور یہ ملک میں پہلی بار ہورہا ہے کہ اقتدارمیں آنے سے پہلے ہی کسی انسان کو کرپٹ کہہ دیا جائے۔

چئیرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ نوازشریف نے قومی اسمبلی میں کہا تھا کہ جائیدادوں سے متعلق میرے پاس تمام دستاویزات موجود ہیں لیکن ان کے وکیل نے وہ دستاویزات تاحال عدالت میں پیش نہیں کئے، نوازشریف نے کہا کہ میں ہرفورم پر احتساب کے لئے تیارہوں اور کوئی استثنیٰ نہیں لوں گا لیکن اب وہ پارلیمنٹ کی آڑ لے کر استثنیٰ لے رہے ہیں، جب ہم دھرنا دیتے تھے تو کہا جاتا تھا کہ پارلیمنٹ میں آؤ، پارلیمنٹ میں آئے تو ہمیں بات کرنے کا موقع ہی نہیں دیا گیا اور کہا کہ عدالت میں جاؤ اور جب عدالت گئے تو کہا کہ نوازشریف نے پارلیمنٹ کی پناہ لے کر استثنیٰ لے لی ہے، اب ہم کہاں جائیں۔