ایاز صادق کو اسپیکر قومی اسمبلی نہیں مانتا، عمران خان

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کا کہنا ہے کہ اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق کے فیصلے میں غیر جانبداری نہیں رہی اس لئے وہ آج سے ان کو اسپیکر نہیں مانتے اور آج سے وہ انہیں ان کے نام سے مخاطب کریں گے۔

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ صرف انتخابات کرا دینے سے کسی ملک میں جمہوریت نہیں آتی، ملک میں صاف اور شفاف الیکشن سے جمہوریت مضبوط ہوتی ہے، الیکشن شفاف ہونے کا مطلب ہے کہ اپوزیشن انتخابی نتائج کو تسلیم کرے، 2013 میں ملک کی 22جماعتوں نے کہا کہ الیکشن میں دھاندلی ہوئی، جب تک کسی کو سزاہی نہیں ملے گی تو الیکشن اصلاحات کا بھی کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔

چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ پاناما لیکس کے بعد ہم نے دنیا کے کئی جمہوری حکومتوں کا ردعمل دیکھا، اپوزیشن کا کام حکومت پر نظر رکھنا ہوتا ہے، ڈیوڈ کیمرون کے معاملےکے بعد برطانوی پارلیمنٹ کی کارروائی رکی رہی، برطانوی وزیراعظم نے خود ایوان میں آکر جواب دیا، حکمران جماعت نے ان کی حمایت نہیں کی، ہم نے وزیراعظم سے جواب طلب کیا لیکن کوئی جواب نہیں آیا، ہم پاناما پر جواب مانگتے ہیں تو وزیراعظم فیتے کاٹنے چلے جاتے ہیں، ہمارے پُر امن احتجاج پر حکومت کی جانب سے کہا جاتا ہے کہ جمہوریت ڈی ریل ہو رہی ہے اور ہم فوج کو دعوت دے رہے ہیں۔ انہوں نے پاناما لیکس میں نام نا ہونے کے باوجود خود کو احتساب کے لیے پیش کیا۔ پاناما لیکس کی تحقیقات کے لیے سپریم کورٹ نے حکومت کے ٹی او آر مسترد کر دیے۔ اپوزیشن نے مل کر ٹی او آر بنائے تو حکومت سے جواب آیا اپوزیشن کے ٹی اوآر نواز شریف پر مرکوز ہیں۔