سول اسپتال کوئٹہ میں خودکش دھماکا؛جاں بحق افراد کی تعداد 70 ہوگئی

کوئٹہ: سول اسپتال کی ایمرجنسی میں خود کش دھماکے کے نتیجے میں میڈیا کے نمائندوں اور وکلا سمیت 70 افراد جاں بحق جب کہ 100 سے زائد زخمی ہوگئے۔

کوئٹہ کے علاقے منوجان روڈ پر بلوچستان بار ایسوسی ایشن کے صدر بلال انور کاسی نامعلوم افراد کی فائرنگ سے جاں بحق ہوگئے، ان کی میت سول اسپتال لائی گئی تھی، جس کی وجہ سے وکلا، صحافیوں اور میڈیا سے تعلق رکھنے والے افراد کی بڑی تعداد اسپتال میں پہنچ گئی، اسی دوران اسپتال کے شعبہ حادثات کے مرکزی دروازے پر زور دار دھماکا ہوگیا۔ دھماکے کے بعد ہونے والی فائرنگ سے اسپتال میں بھگدڑ مچ گئی۔

اسپتال ذرائع نے دھماکے کے نتیجے میں 70 افراد کے جاں بحق ہونے کی تصدیق کردی ہے جن میں بلوچستان بار کے سابق صدر بازمحمد کاکڑ ، سابق میئر کوئٹہ مقبول لہڑی کے کزن محمود لہڑی، عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر عسکر اچکزئی اور ان کے بھائی اصغراچکزئی، سابق گورنر بلوچستان فضل آغا کے نواسے ضیا الدین بھی شامل ہیں۔

سول اسپتال میں جگہ نہ ہونے کی وجہ سے زخمیوں کو سی ایم ایچ منتقل کردیا گیا جہاں سے شدید زخمیوں کو ابتدائی طبی امداد کے بعد کراچی سمیت دیگر شہروں کے مختلف اسپتالوں میں منتقل کردیا گیا۔

دوسری جانب واقعے کے بعد مشتعل افراد نے احتجاج کرتے ہوئے اسپتال کے مختلف شعبوں میں گھس کر توڑ پھوڑ کی جس کے نتیجے میں طبی سہولیات کی فراہمی کا سامان اور دیگر دفتری سامان کا نقصان ہوا ہے جس کی مالیت لاکھوں روپے ہے۔