وزیر اعظم کی عدم شرکت ،اپوزیشن کا اسمبلی کی کارروائی سے بائیکاٹ

اسلام آباد : قومی اسمبلی کے اجلاس میں پانامہ لیکس کے معاملے پر وزیراعظم نواز شریف کی عدم شرکت پر متحدہ اپوزیشن نے مسلسل دوسرے روز بھی ایوان سے واک آؤٹ کر تے ہوئے کارروائی کا با ئیکاٹ کیا ‘ وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات و قومی ورثہ سینیٹر پرویز رشید نے کہا کہ وزیراعظم نواز شریف پہلی دفعہ ایوان کے رکن نہیں بنے وہ اس ملک کے تیسری بار وزیراعظم بنے ہیں انہیں ایوان میں آنے میں کوئی ہچکچاہٹ نہیں‘ آج وزیراعظم کی قومی سلامتی کے ادارون سے اہم ملاقات جاری ہے.

وزیراعظم نے (آج) بدھ کو تاجکستان کے دورے پر جانا ہے وزیراعظم جمعہ کو ایوان میں آئیں گے اور اپوزیشن کے تمام سوالوں کے جواب دیں گے‘ اپوزیشن لیڈر سید خورشید شاہ نے کہا کہ وزیراعظم اور ان کی فیملی پرداغ لگے ہیں ہم چاہتے ہیں کہ وہ داغ دھل جائیں‘ پارلیمنٹ نمائندہ فورم ہے جہاں تمام مسائل پر بات چیت کرتے ہیں‘ وزیراعظم ایوان میں آئیں ہم انہیں سنیں گے کوئی شور شرابہ نہیں ہوگا‘ جمعہ کو وزیراعظم آئیں گے تو ہم بھی آجائیں گے ایوان میں واپس۔ منگل کو قومی اسمبلی کا اجلاس سپیکر ایاز صادق کی زیر صدارت شروع ہوا

تلاوت قرآن پاک و نعت کے بعد اجلاس کی کارروائی شروع ہوتے ہی متحدہ اپوزیشن وزیراعظم نواز شریف کی ایوان میں پانامہ لیکس کے معاملے پر عدم شرکت پر ایوان سے واک آؤٹ کرگئی۔ وزیر امور کشمیر برجیس طاہر سپیکر ایاز صادق کی ہدایت پر اپوزیشن کو ایوان میں واپس منا کر لائے اس موقع پر اپوزیشن لیڈر سید خورشید شاہ نے کہا کہ پارلیمنٹ 20کروڑ عوام کا نمائندہ ورم ہے جہاں تمام مسائل پر بات چیت کی جانی چاہئے وزیراعظم نواز شریف کو پارلیمنٹ پر اعتماد ہونا چاہئے۔ اس ایوان نے وزیراعظم کو گہرے سمندر سے باہر نکالا انہوں نے کہا کہ آج پھر پانامہ لیکس میں دو سو پچاس سے زائد پاکستانیوں کا نام آگیا کرپشن سے پاکستان کا نام بدنام ہورہا ہے۔